ہانگ کانگ ائیرپورٹ کا امریکی حمایت یافتہ مظاہرین نے گھیراؤ کرلیا

0

عوامی احتجاج کے باعث ایئرپورٹ آپریشنز بری طرح متاثر ہوئے صورتحال کے پیش نظر چیک ان کا عمل مکمل کرنے والی روانگی کی پروازیں اور ہانگ کانگ کیلئے آنے والی پروازوں کے علاوہ دن بھر کیلئے تمام پروازوں کو منسوخ کردیا گیا

مکاؤ (میزان نیوز) ہانگ کانگ میں امریکی حمایت یافتہ مظاہرین پر مبینہ پولیس تشدد کے خلاف احتجاج کرنے والے ہزاروں مظاہرین کی ایئرپورٹ کا گھیراؤ کرلیا، جس کے بعد پیر کو وہاں آنے اور جانے والی تمام پروازیں منسوخ کردی گئیں، فرانسیسی خبررساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق دنیا کے مصروف ترین مرکز میں سے ایک پر شٹ ڈاؤن کی صورتحال اس وقت دیکھنےمیں آئی جب چینی حکومت کا غصہ بڑھ رہا ہے اور اس نے کچھ پرتشدد مظاہروں کی مذمت کرتے ہوئے اسے دہشت گردی قرار دیا ہے، اس صورتحال نے 10 ہفتوں سے جاری بحران کو مزید ڈرامائی صورتحال کے تحت بڑھا دیا ہے، خیال رہے کہ چین کی جانب سے مجرمان کی حوالگی کی اجازت دینے سے متعلق بل سامنے آنے کے بعد شروع ہونے والا یہ احتجاج مسلسل 10 ہفتوں سے جاری ہے، یہ احتجاج 1997 سے ہانگ کانگ پر حکمرانی کرنے والے چین کے لیے بہت بڑا چیلنج بن گیا ہے، انتظامیہ کے مطابق 5 ہزار سے زائد مظاہرین نے پیر کو ہانگ کانگ ایئرپورٹ کا رخ کیا، جنہوں نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے، جس پر درج نعروں میں ریلیوں پر پولیس تشدد کی مذمت کی گئی تھی، اگرچہ گزشتہ 3 روز میں دیگر ریلیاں بھی منعقد ہوئیں لیکن ایئرپورٹ انتظامیہ کا کہنا تھا کہ پیر کا احتجاج افراتفری کا باعث بنا، ایک بیان میں انتظامیہ نے کہا کہ ہانگ کانگ انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر عوامی احتجاج کے باعث ایئرپورٹ آپریشنز کے امور بری طرح متاثر ہوئے، صورت حال کے پیش نظر چیک ان کا عمل مکمل کرنے والی روانگی کی پروازیں اور ہانگ کانگ کیلئے آنے والی پروازوں کے علاوہ دن بھر کیلئے تمام پروازوں کو منسوخ کردیا گیا، انتظامیہ نے خبردار کیا کہ ایئرپورٹ کو آنے والے روٹ پر بہت بھیڑ ہے اور کار پارکنگ کی جگہ مکمل بھر چکی ہے، لہٰذا عوام کو مشورہ دیا جاتا ہے کہ وہ ایئرپورٹ نہیں آئیں، تاہم ایئرپورٹ پر احتجاج کرنے والے ہزاروں مظاہرین نے پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر ہانگ کانگ محفوظ نہیں اور پولیس شرم کرو درج تھا، مظاہرین کی جانب سے الزامات لگائے گئے کہ پولیس ان کے مظاہروں کو روکنے کے لیے پرتشدد حربوں کا تیزی سے استعمال کر رہی ہے، ادھر بیجنگ انتظامیہ نے ان پرتشدد مظاہروں پر سخت تنقید کرتے ہوئے پولیس افسران پر پیٹرول بم پھینکنے والوں کو دہشت گردی سے تشبیہ دی۔

Share.

About Author

Leave A Reply