کشمیر لاک ڈاؤن کرنیوالی حکومت نازی نظریات سے متاثر ہے، عمران

0

مجھے خدشہ ہے کہ نازیوں کے نظریات سے متاثر ہوکر اور ان جیسی بالادستی کی کوشش کے آر ایس ایس کے ہندو انتہا پسند نظریئے کے اثرات مقبوضہ کشمیر تک ہی محدود نہیں رہیں گے بلکہ ہندوستان کے مسلمان بھی اس کی لپیٹ میں آئیں گے۔۔۔

اسلام آباد (میزان نیوز) پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے بھارت کی جانب سے مقبوضہ جموں اور کشمیر کی خصوصی حیثیت تبدیل کیے جانے اور وادی میں جاری کرفیو، کریک ڈاون اور کشمیریوں کے ماورائے عدالت قتل کو جرمنی کے نازیوں کے نظریات سے متاثرہ قرار دیتے ہوئے تنقید کا نشانہ بنایا ہے، وزیراعظم عمران خان نے سماجی روابط کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک پیغام میں کہا کہ نازیوں سے متاثر آر ایس ایس کے نظریات کے سائے میں بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں کرفیو، کریک ڈاؤن اور کشمیریوں کے قتل عام کے مناظر سامنے آرہے ہیں، ان کا کہنا تھا کہ مقبوضہ وادی میں کوشش کی جارہی ہے کہ نسلی بنیادوں پر وادی میں نسل کشی کا سہارا لے کر کشمیر میں آبادیات کا تناسب تبدیل کیا جائے، اپنے ٹوئٹر پیغام میں وزیراعظم عمران خان نے سوال کیا کہ کیا دنیا میونخ میں ہٹلر کی جانب سے اٹھائے گئے مظالم کی طرح یہاں بھی خاموشی سے تماشہ دیکھے گی؟ انہوں نے مزید کہا کہ مجھے خدشہ ہے کہ نازیوں کے نظریات سے متاثر ہوکر اور ان جیسی بالادستی کی کوشش کے آر ایس ایس کے ہندو انتہا پسند نظریئے کے اثرات مقبوضہ کشمیر تک ہی محدود نہیں رہیں گے بلکہ ہندوستان کے مسلمان بھی اس کی لپیٹ میں آئیں گے، عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ یہ معاملہ بالآخر پاکستان پر حملے تک جاپہنچے گا، انہوں نے دعویٰ کیا کہ ہندو انتہا پسند تنظیم آر ایس ایس کے ارکان ہٹلر کی لیبینزرم ہی کی ایک قسم ہیں، دوسری طرف مقبوضہ کشمیر کے مرکزی شہر سری نگر میں سرکاری دفتر کے باہر بیرونی دنیا سے رابطہ قائم کرنے کے لیے 2 منٹ کی فون کال کے لیے لمبی قطاریں لگائی جارہی ہیں، مقبوضہ وادی کے مقامی افراد بھارتی حکومت کی جانب سے لگائی گئی پابندی کے باعث ایک ہفتے سے موبائل فون اور انٹرنیٹ سروس سے محروم ہیں، سری نگر میں ڈپٹی کمشنر کے دفتر کے باہر عوام کی بڑی قطار بھارت کے دیگر علاقوں میں مقیم اپنے عزیز و اقارب سے بات کرنے کیلئے اپنی باری کا انتظار کرنے پر مجبور ہے۔

Share.

About Author

Leave A Reply