نیٹو فوجی مشن اور امریکی سفارتخانے کے قریب بڑا حملہ 10 شہری ہلاک

0

افغانستان میں گزشتہ تین روز میں اس حساس اور محفوظ سمجھے جانیوالے علاقے میں یہ دوسرا بڑا حملہ ہے پیر کے روز بھی طالبان نے اُس بین الاقوامی کمپاؤنڈ کو نشانہ بنانے کی کوشش کی جہاں غیرملکی اداروں کے دفاتر اور رہائش گاہیں واقع ہیں۔۔۔

کابل (میزان نیوز) افغان طالبان نے کابل میں نیٹو فوجی مشن کے ہیڈکوارٹرز اور امریکی سفارت خانے کے قریب ایک بڑا حملہ کیا ہے، جس کے نتیجے میں کم از کم دس افراد ہلاک اور چالیس سے زائد زخمی ہو گئے ہیں، افغان وزارت داخلہ کے ترجمان نصرت رحیمی کے مطابق یہ حملہ بارود سے بھری ایک چھوٹی بس کے ذریعے کیا گیا جبکہ تمام ہلاک شدگان عام شہری ہیں، ایک سرکاری بیان کے مطابق اس حملے میں کم از کم بارہ گاڑیاں بھی تباہ ہوگئیں، دوسری جانب طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ طالبان کے ایک خودکش حملہ آور نے افغان خفیہ ایجنسی کے مرکزی دفتر کو نشانہ بنایا اور یہ حملہ اس وقت کیا گیا، جب غیرملکی فورسز کا ایک قافلہ وہاں سے گزر رہا تھا، گزشتہ تین روز کے اندر اس حساس اور محفوظ سمجھے جانے والے علاقے میں ہونے والا یہ دوسرا بڑا حملہ ہے، امریکا کے ساتھ کسی امن معاہدے کے انتہائی قریب پہنچنے کے باوجود طالبان ایسے بڑے حملوں کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں، دریں اثناء کابل میں طبی حکام نے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا ہے، یاد رہے کہ افغان طالبان اور امریکا جس قدر امن معاہدے کے قریب پہنچ رہے ہیں، طالبان کے حملوں میں ویسے ہی اضافہ دیکھنے میں آتا جا رہا ہے، یہ حملے بھی ایک ایسے وقت پر ہورہے ہیں، جب امریکا کے خصوصی مذاکرات کار زلمے خلیل زاد بھی کابل ہی میں موجود ہیں، وہ طالبان کے ساتھ ہونے والے ممکنہ معاہدے کے مسودے کے حوالے سے افغان صدر اشرف غنی اور نیٹو حکام کی رضامندی حاصل کرنا چاہتے ہیں، اس ممکنہ معاہدے پر حتمی دستخط امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی رضامندی کے بعد ہی کیے جائیں گے، گزشتہ پیر کے روز بھی طالبان نے اُس بین الاقوامی کمپاؤنڈ کو نشانہ بنانے کی کوشش کی تھی، جہاں غیرملکی اداروں کے دفاتر اور رہائش گاہیں واقع ہیں، اس حملے میں بھی سولہ افراد ہلاک اور ایک سو سے زائد زخمی ہو گئے تھے۔ بعدازاں ایک مشتعل ہجوم نے گرین ویلج نامی بین الاقوامی کمپاؤنڈ کے ایک حصے پر حملہ کرتے ہوئے وہاں آگ بھی لگا دی تھی، جس کی وجہ سے تقریباﹰ چار سو غیر ملکیوں کو ہنگامی طور پر وہاں سے نکال لیا گیا تھا۔

Share.

About Author

Leave A Reply