میری حکومت تنازعات کے عسکری حل کی قائل نہیں، عمران خان

0

عمران خان نے اپنی ایک ٹوئٹ میں کہا ہے کہ میرا دورہ افغانستان امن کے حوالے سے پاکستان کے عزمِ صمیم کے اظہار کی جانب ایک اور قدم ہے افغان عوام کے بعد اس امن میں بڑا حصہ پاکستان کا ہے امن سے باہمی تجارت کے دروازے کھلیں گے۔۔۔

اسلام آباد (میزان نیوز) پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے ایک بار پھر کہا ہے کہ وہ کبھی بھی تنازعات کے عسکری حل کے قائل نہیں رہے جبکہ افغان عوام کے بعد وہاں امن میں سب سے بڑا حصہ پاکستان کا ہے، سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹوئٹ میں عمران خان نے کہا کہ میرا دورہ افغانستان امن کے حوالے سے پاکستان کے عزمِ صمیم کے اظہار کی جانب ایک اور قدم ہے، انہوں نے کہا کہ میں کبھی بھی تنازعات کے عسکری حل کا قائل نہیں رہا چنانچہ ہمیشہ سے میرا نظریہ رہا ہے کہ افغانستان میں امن سیاسی گفت و شنید ہی سے حاصل ہوگا، ان کا کہنا تھا کہ افغان عوام کے بعد اس امن میں سب سے بڑا حصہ ہمارا ہے کیونکہ اس سے باہمی روابط و تجارت کے دروازے کھلیں گے اور خوشحالی دونوں ممالک کا رخ کرے گی، امن و تجارت کے ثمرات بطور خاص ہمارے قبائلی عوام تک پہنچیں گے جنہوں نے افغان جنگ کی تباہ کاریوں کا بارِگراں اٹھایا، واضح رہے کہ عمران خان نے 2018 میں وزارت عظمیٰ سنبھالنے کے بعد گزشتہ روز افغانستان کا پہلا دورہ کیا تھا، ان کے اس دورے میں پاکستان اور افغانستان نے قریبی تعاون اور انٹیلی جنس شیئرنگ کے ذریعے افغانستان میں دہشت گردی کے واقعات کے حالیہ سلسلے کو کم کرنے کے لیے اپنی مشترکہ کوششوں کو تیز کرنے پر اتفاق کیا تھا، افغان صدارتی محل میں وزیراعظم عمران خان اور افغان صدر اشرف غنی نے مشترکہ پریس کانفرنس کی، جس میں افغانستان میں امن اور استحکام کی بحالی کے لیے ہنگامی اقدامات کرنے کے عزم کا اعادہ کیا گیا۔

Share.

About Author

Leave A Reply