مفتی منیب کو رویت ہلال🌙 کمیٹی کی سربراہی سے سبکدوش کر دیا

0

مفتی منیب الرحمٰن بریلوی مسلک کے عمائدین اور علماء کی حمایت سے بھی محروم ہوگئے تھے رویت ہلال کمیٹی کے نامزد دیگر ارکان میں ڈاکٹر راغب نعیمی، علامہ محمد حسین اکبر، مولانا فضل الرحیم، ڈاکٹر یاسین اور سید علی کرار نقوی شامل ہیں۔۔۔

اسلام آباد (میزان نیوز) پاکستان کی وفاقی حکومت نے رویت ہلال کمیٹی کے چیئرمین مفتی منیب الرحمٰن کو عہدے سے ہٹا کر دیوبندی مسلک کے ممتاز عالم دین اور بادشاہی مسجد لاہور کے خطیب مولانا عبدالخبیر آزاد کو کمیٹی کا نیا چیئرمین مقرر کردیا، وزارت مذہبی امور سے جاری نوٹی فکیشن کے مطابق رویت ہلال کمیٹی کی تشکیل نو کردی گئی ہے اور کمیٹی میں 19 ارکان شامل ہوں گے، نوٹی فکیشن میں کہا گیا کہ مولانا عبدالخبیر آزاد کو کمیٹی کا نیا چیئرمین مقرر کیا گیا ہے جبکہ دیگر اراکین میں ڈاکٹر راغب حسین نعیمی، علامہ محمد حسین اکبر، مولانا فضل الرحیم، ڈاکٹر یاسین ظفر، مفتی اقبال چشتی، ڈاکٹر مفتی علی اصغر، مفتی فیصل احمد اور سید علی کرار نقوی شامل ہیں، اس کے علاوہ مفتی یوسف کشمیری، حافظ عبدالغفور، مفتی فضلِ جمیل، مفتی قاری میر اللہ، صاحبزادہ سید حبیب اللہ چشتی اور مفتی ضمیر ساجد بھی کمیٹی کا حصہ ہوں گے، واضح رہے کہ مفتی منیب الرحمٰن کی جانب سے ایک متنازعہ بیان کے بعد کئی ارکان نے اِن کی صدارت میں کام کرنے سے انکار کردیا تھا، مفتی منیب الرحمٰن بریلوی مسلک کے عمائدین اور علماء کی حمایت سے بھی محروم ہوگئے تھے، حالیہ برسوں میں چاند دیکھنے کے معاملے پر مفتی منیب الرحمٰن پر شدید تنقید کی جاتی رہی ہے، مفتی منیب الرحمٰن نے وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے جاری کردہ سالانہ کیلنڈر کے بھی شدید مخالفت کی تھی، خیال رہے کہ مفتی منیب الرحمٰن کو 20 سال قبل 2000 میں چیئرمین رویت ہلال کمیٹی بنایا گیا تھا اور 2012 میں اس حوالے سے دوبارہ نوٹی کیشن جاری کیا گیا تھا۔

Share.

About Author

Leave A Reply