شہید سلیمانی کا قتل، پاکستان غیر جانبداری قائم نہ رکھ سکا شیعہ ناخوش

0

مجلس وحدت المسلیمین کے مطابق پاکستان کو فوری طور پر واضح الفاظ میں اس امریکی اقدام کی مذمت کرنی چاہیئے جند اللہ اور جیش العدل نامی تنظیموں کو فنڈنگ سعودی عرب اور تربیت اسرائیل فراہم کرتا ہے پاکستان کو سخت امتحان کا سامنا ہے۔۔۔

برلن (میزان نیوز) مشرق وسطٰی میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کے پیش نظر پاکستان کی فوج نے اس بات کا اشارہ دیا ہے کہ اس کا ملک نہ ہی کسی تنازعے کا حصہ بنے گا اور نہ ہی اپنی زمین کسی کے بھی خلاف استعمال ہونے دے گا اور امن کی کوششوں کی حمایت کرے گا، ایران کا دعوٰی ہے کہ ماضی میں جند اللہ اور جیش العدل نامی دہشت گرد تنظیموں نے پاکستان کی سرحد سے آکر ایرانی سپاہیوں اور تنصیبات پر حملے کیے لیکن پاکستان نے حال ہی میں یہ کوشش کی کہ وہ ایران اور سعودی عرب کے درمیان صلح صفائی کرائے تاکہ اس طرح کے دہشت گرد حملے روکے جاسکیں، خیال رہے جند اللہ اور جیش العدل نامی تنظیموں کو فنڈنگ سعودی عرب اور تربیت اسرائیل فراہم کرتا ہے، ماہرین کے خیال میں پاکستان کی فوج کی طرف سے یہ اعلان غیرجانبداری ہے، واضح رہے کہ ماضی میں پاکستانی حکومتوں نے خطے اور دنیا میں ہونے والے کئے تنازعات میں جانبدار پوزیشن اختیار کی تھی، آزادی کے کچھ برسوں بعد ملک سرد جنگ میں امریکا کا قریبی اتحادی بنا اور بعد کے عشروں میں اشتراکیت کے خلاف بننے والے مغربی دفاعی اتحادوں کا بھی حصہ بنا، افغانستان میں سوویت مداخلت کے بعد پاکستان نے امریکا، سعودی عرب اور کئی مغربی و مسلم ممالک کے ساتھ مل کر افغان مجاہدین کی مدد کی، سنہ 2001ء میں گو کہ افغان طالبان کا پاکستان قریبی اتحادی تھا لیکن پاکستان نے دہشت گردی کی جنگ میں امریکا کا ساتھ دیا، تاہم اب اسلام آباد کا کہنا ہے کہ وہ کسی بھی جنگ کا حصہ بننا نہیں چاہتا، معروف دفاعی تجزیہ نگار جنرل امجد شعیب کے خیال میں پاکستان اب عزم مصمم رکھتا ہے کہ وہ کسی جنگ کا حصہ نہیں بنے گا، ہم نے دہشت گردی کی جنگ میں امریکا کا ساتھ دیا، ہزاروں افراد ہلاک ہوئے، اربوں ڈالرز کا نقصان ہوا اور امریکا نے ہم پر بھارت کو ترجیح دی، ان کا کہنا تھا کہ یہ حکومت بھی نہیں چاہتی کہ پاکستان کسی تنازعے کا حصہ بنے اور فوج بھی تنازعے کا حصہ بننا نہیں چاہتی، لیکن اگر پھر بھی پاکستان پر دباؤ ڈالا جائے تو حکومت پارلیمنٹ جا سکتی ہے اور پارلیمنٹ کبھی بھی ملک کو جنگ کا حصہ بننے نہیں دے گی، معروف سیاست دان سینیٹر حاصل بزنجو کے خیال میں بھی حکومت کیلئے یہ فیصلہ کرنا مشکل ہوگا کہ وہ کسی ایک فریق کا ساتھ دے، ملک میں ایک بڑی تعداد شیعہ مسلمانوں کی ہے، جو فوج، بیورکریسی اور سیاسی جماعتوں میں بھی موجود ہیں، اگر ہم اس تنازعے کا حصہ بنتے ہیں تو ملک میں فرقہ وارانہ آگ بھڑک اٹھے گی اور پاکستان کے طاقتور حلقے بھی اس بات کو سمجھتے ہیں، لیکن کئی ماہرین کا خیال ہے کہ پاکستان کے معاشی مسائل دن بہ دن بڑھتے جارہے ہیں اور ایسی صورت میں ملک امریکا اور سعودی عرب کو ناراض نہیں کر سکتا ہے۔ شیعہ تنظیم پاسبان عزا کے صدر راشد رضوی کا خیال ہے کہ پاکستان پہلے ہی جانبدار ہے اور کسی تصادم کی صورت میں امریکا اسلام آباد سے لوجسٹکس بھی مانگے گا اور فضائی اڈے بھی مانگے گا۔ “سیدھی سی بات ہے کہ پاکستان کو پیسے کی ضرورت ہے اور وہ پیسہ سعودی عرب اور امریکا دے رہا ہے۔ اس کے علاوہ سلیمانی کی شہادت کے فوراً بعد امریکا نے پاکستان کی فوجی تربیت کا پروگرام شروع کردیا جب کہ نہ ہی وزیر اعظم نے اور نہ کسی اور حکومتی ذمہ دار نے سلیمانی کی شہادت کی مذمت کی، تو اس سے یہ بات واضح ہے کہ پاکستان کا جھکاؤ سعودی عرب اور امریکا کی طرف ہے اور کسی تنازعے کی صورت میں وہ یقیناً ان ہی ممالک کا ساتھ دے گا، انہوں نے خبر دار کیا کہ اگر پاکستان نے ایسا کیا تو یہ ملک کی سماجی یکجہتی کیلئے بہت برا ہوگا، میرے خیال میں اگر ایران پر حملہ ہوتا ہے اور پاکستان جانبداری دکھاتا ہے تو شیعہ نوجوان عسکریت پسندی کی طرف مائل ہو جائیں گے، اگر وہ شام میں مقدس مقامات کی حفاظت کیلئے لڑنے گئے تھے تو ایران میں مشہد اور قم سمیت کئی مقامات مقدسہ کیلئے کیوں نہیں لڑیں گے، ان کا کہنا تھا کہ پاکستانی شیعہ جنرل سلیمانی کی اس لئے عزت نہیں کرتے تھے کہ وہ ایرانی تھے، بلکہ پاکستان میں شیعہ کمیونٹی کا خیال یہ ہے کہ انہیں اس لئے قتل کیا گیا کہ انہوں نے حضرت زینب کے روضے سمیت کئی مقدس مقامات  کی حفاظت کی، جو ان کا شیعہ کمیونٹی پر ایک بہت بڑا احسان ہے، جرمن نشریاتی ادارے کو کئی شیعہ تنظیموں نے بتایا کہ وہ آنے والے دنوں میں مزید احتجاجی پروگراموں کو حتمی شکل دے رہی ہیں، ملک کی شیعہ آبادی اس بات پر بھی چراغ پا ہے کہ پاکستان نے اس قتل کی اور امریکی اقدام کی مذمت کیوں نہیں کی، مجلس وحدت المسلیمین کے رہنما ناصر شیرازی کا کہنا ہے کہ پاکستان کو فوری طور پر واضح الفاظ میں اس امریکی اقدام کی مذمت کرنی چاہیئے، قائد اعظم یونیورسٹی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات سے وابستہ ڈاکٹر فرحان حنیف صدیقی کا کہنا ہے کہ پاکستان کی شیعہ کمیونٹی بہت مذہبی ہے اور اپنے عقائد کے حوالے سے بہت حساس ہے، پاکستانی شیعہ پہلے بھی داعش کے خلاف لڑنے کیلئے شام اور عراق گئے تھے اور اگر ایران پر حملہ ہوتا ہے تو یقینًا بہت سارے شیعہ نوجوان، خصوصًا پارہ چناراور گللت سے امریکا کے خلاف لڑنے کیلئے جائیں گے۔

Share.

About Author

Leave A Reply