سعودی عرب مذاکرات چاہتا ہے تو قتل غارت بند کرئے،جواد ظریف

0

امریکہ ایک ایسا غاصب ملک ہے جس کا شام سے کوئی تعلق نہیں اور نہ ہی اس کی وہاں موجودگی کا کوئی جواز بنتا ہے آدانا مفاہمت نے ترکی اور شام کیلئے ایک فریم ورک مہیا کردیا ہے اور ایران بھی اس حوالے سے تعاون کیلئے تیار ہے۔۔۔۔

تہران (میزان نیوز) اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے سعودی ولیعہد محمد بن سلمان کی جانب سے عراق اور پاکستان سے ثالثی کی درخواست کرنے سے متعلق اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب موجودہ حالات میں ایران سے مذاکرات میں دلچسپی رکھتا ہے تاہم اگر وہ لوگوں کے قتل عام کے بجائے خطے کے مسائل کو مذاکرات کی میز پر حل کرنا چاہے تو اسلامی جمہوریہ ایران، بھی اس کا ساتھ دے گا، انہوں نے کہا کہ ایران بارہا اپنے اس موقف کا اعادہ کرتا رہا ہے کہ ہم علاقائی امن کے لئے ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعاون پر تیار ہیں، محمد جواد ظریف نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ کی حالیہ جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر ایران کے صدر کی ہرمز امن منصوبہ بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے، نیویارک ٹائمز کے مطابق سعودی عرب کی تیل تنصیبات پر یمن کے حالیہ حملوں کے بعد عراقی اور پاکستانی حکام نے کہا ہے کہ  سعودی عرب کے ولیعہد محمد بن سلمان نے ان سے ایران اور سعودی عرب کے درمیان کشیدگی کو کم کرنے کیلئے ثالثی کا کردار ادا کرنے کی درخواست کی ہے، ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نےاپنے ایک ٹوئٹ میں کہا ہے کہ امریکہ ایک ایسا غاصب ملک ہے جس کا شام سے کوئی تعلق نہیں اور نہ ہی اس کی وہاں موجودگی کا کوئی جواز بنتا ہے، محمد جواد ظریف نے مزید کہا کہ شام میں قیام امن کا حصول اور دہشت گردوں کے خلاف جنگ میں کامیابی صرف شام کی سالمیت اور شامی عوام  کا احترام کرنے سے ممکن ہوگی، انہوں نے کہا کہ آدانا مفاہمت نے ترکی اور شام کیلئے ایک فریم ورک مہیا کردیا ہے اور ایران بھی اس حوالے سے تعاون کیلئے تیار ہے۔

Share.

About Author

Leave A Reply