سعودی بادشاہت کے خلاف سرگرم کارکن لوجین کو سزا سنا دی گئی

0

نو منتخب امریکی صدر جو بائیڈن اپنی انتخابی مہم کے دوران ریاض میں انسانی حقوق کے ریکارڈ پر تنقید کرچکے ہیں سعودی ولی عہد بن سلمان عدالت سے ایسا فیصلہ دلوایا گیا ہے جسکے مطابق لوجین الحاتلول فروری 2021 کے آخر میں رہا ہوجائیں گی۔۔۔

ریاض (میزان نیوز) سعودی عرب کی ایک عدالت نے خواتین کے حقوق کیلئے سرگرم کارکن لوجین الحاتلول کو 5 سال اور 8 ماہ قید کی سزا سنائی ہے، غیرملکی خبررساں ادارے رائٹرز کے مطابق یکطرفہ طور پر مقدمہ چلائے جانے پر بین الاقوامی سطح پر مذمت کی گئی ہے اور عالمی سطح پر سعودی عدالت ک فیصلے کو انصاف کا قتل قرار دیا جارہا ہے، 31 سالہ لوجین الحاتلو کو خواتین کی حقوق کیلئے آواز بلند کرنے پر کم از کم ایک درجن دیگر کارکنوں کے ساتھ 2018 میں گرفتار کیا گیا تھا، عدالتی فیصلے سے معلوم ہوتا ہے کہ ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نو منتخب امریکی صدر جوبائیڈن کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے ایسا فیصلہ دلوایا گیا ہے جسکے مطابق لوجین الحاتلول فروری 2021 کے آخر میں رہا ہوجائیں گی، جو بائیڈن اپنی انتخابی مہم کے دوران ریاض میں انسانی حقوق کے ریکارڈ پر تنقید کرچکے ہیں، سبق اور الشرک الاوسط اخبارات کے مطابق لوجین الحاتلول پر سعودی سیاسی نظام کو تبدیل کرنے اور قومی سلامتی کو نقصان پہنچانے کی کوشش کرنے کا الزام عائد کیا گیا تھا، لوجین الحاتلول کی بہن نے بتایا عدالت نے مجموعی سزا سے مئی 2018 کو گرفتاری کے بعد دو سال اور 10 ماہ کی سزا معطل کردی، اخبارات کے مطابق انہیں فروری 2021 کے آخر میں رہا کیا جاسکتا ہے اگر وہ کسی بھی جرم کی مرتکب نہیں ہیں، سزا پانے والی انسانی حقوق کی رضا کار کی بہن نے ٹوئٹ میں بتایا کہ لوجین الحاتلول پر 5 سال کی سفری پابندی عائد کی ہے، انہوں نے مزید کہا کہ سرکاری وکیل اور لوجین الحاتلول جج کے فیصلے پر اپیل کرسکتے ہیں، دوسری جانب اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے ماہرین نے ان الزامات کو ناقابل فہم قرار دیا تھا اور امریکا اور یورپ کے ممتاز انسانی و قانونی حقوق کے گروپوں لوجین الحاتلول کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے، لوجین الحاتلول کو 2013 میں اس وقت مقبولیت حاصل ہوئی جب انہوں نے سعودی عرب میں خواتین کے ڈرائیونگ کے حق کیلئے عوامی مہم شروع کی، سعودی عہدیداروں نے کہا کہ خواتین کارکنوں کی گرفتاری سعودی مفادات کو نقصان پہنچانے اور بیرون ملک دشمن عناصر کی حمایت کی پیش نظر کی گئی، انہوں نے کہا کہ ان میں سے کچھ خواتین کو حراست میں لیا گیا ہے جبکہ ان کی جانچ جاری ہے۔

Share.

About Author

Leave A Reply