کپتان سرفراز تعصب کا شکار ہوگئے، پی سی پی شدید تنقید کا نشانہ بنی

0

چیف سیلکٹر مصباح اور قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سرفراز احمد کے درمیان ہم آھنگی کا فقدان تھا سرفراز احمد خان سے ٹیسٹ اور ٹی 20 کی کپتانی واپس لیتے ہوئے اظہر علی کو ٹیسٹ جبکہ بابر اعظم کو ٹی ٹوئنٹی کا کپتان مقرر کردیا۔۔۔

لاہور (میزان نیوز) پاکستان کی قومی ٹیم کے وکٹ کیپر بلے باز سرفراز احمد کو پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے دو فارمیٹس کی قیادت سے ہٹائے جانے کے بعد ایک نیا تنازع کھڑا ہوگیا ہے، پاکستان کرکٹ بورڈ نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک پوسٹ کی جس پر اسے شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا، ٹوئٹ میں قومی ٹیم کے کھلاڑیوں کو جشن مناتے ہوئے دیکھا جا سکتا تھا، جس سے شائقین کرکٹ کو یہ تاثر گیا کہ قومی ٹیم کے کھلاڑی سرفراز کو قیادت سے ہٹانے کا جشن منا رہے ہیں، اس ویڈیو کے دوران موقع کی مناسبت سے سب سے قابل اعتراض بات یہ تھی کہ ویڈیو کے دوران کسی ٹیم یا مینجمنٹ کے کسی رکن نے سرفراز کو بظاہر گراؤنڈ سے باہر جانے کا اشارہ کیا، اس ٹوئٹ سے یہ تاثر بھی کیا کہ شاید قومی ٹیم کسی گروہ بندی کا شکار تھی جو ممکنہ شکست کا سبب بنی اور اسی کی وجہ سے پی سی بی کو سرفراز کو قیادت سے ہٹانا پرا اور اس اقدام کے بعد کھلاڑیوں نے جشن منایا، شائقین کرکٹ نے پی سی بی کی اس ٹوئٹ کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا جس کے بعد پی سی بی نے اس پوسٹ کو اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے ڈیلیٹ کردیا ہے لیکن اس سے ثابت ہوتا ہے کہ سرفراز احمد کیساتھ تعصب برتا گیا اور ایک سوچی سمجھی منصوبہ بندی کو اختیار کیا گیا، کراچی سے تعلق رکھنے والے کھلاڑیوں کو پہلے بھی تعصب کا نشانہ بنایا جاتا رہا ہے، جسکی ایک مثال جاوید میاں داد ہیں، جو اب بھی نجی محفلوں میں قومی سطح پر کراچی والوں کیساتھ تعصب کے برتاؤ کا ذکر کرتے ہیں، قبل ازیں پاکستان کرکٹ بورڈ نے وکٹ کیپر بلے باز سرفراز احمد سے ٹیسٹ اور ٹی20 کی کپتانی واپس لیتے ہوئے اظہر علی کو ٹیسٹ جبکہ بابر اعظم کو ٹی ٹوئنٹی کا کپتان مقرر کردیا، جس کی شدید مذمت کی جارہی ہے، ذرائع کے مطابق چیف سیلکٹر مصباح اور قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سرفراز احمد کے درمیان ہم آھنگی کا فقدان تھا اس لئے سرفراز احمد کی قربانی دی گئی ہے۔

Share.

About Author

Leave A Reply