بلوچستان میں سکیورٹی فورس کی گاڑی پر حملہ سات لیویز اہلکارشدید زخمی

0

بلوچستان میں سال 2018ء سات خود کش حملے اور 84 مختلف نوعیت کے بم دھماکے ہوئے 12 دسمبر کو آواران میں ہونے والے دہشت گردوں کے حملے میں پاک فوج کے 6 جوان شہید ہوئے ۔۔۔۔۔۔

کوئٹہ (میزان نیوز) پاکستان کے سورش ذدہ صوبہ بلوچستان کے ضلع پشین میں سکیورٹی فورس کی گاڑی کے قریب بم دھماکے سے 7 افراد زخمی ہوگئے، پولیس کے مطابق پشین میں پولیس لائنز کے قریب لیویز تحصیلدار عبدالمالک ترین کی گاڑی کے قریب بم دھماکا ہوا جس میں تحصیلدار سمیت سات افراد زخمی ہوگئے، بم موٹر سائیکل میں نصب تھا اور حملے میں لیویز تحصیلدار عبدالمالک ترین کو نشانہ بنایا گیا، زخمیوں میں 4 راہگیر اور تحصیلدار کے علاوہ 2 لیویز اہلکار بھی شامل ہیں، عبدالمالک ترین کو طبی امداد کیلئے کوئٹہ منتقل کردیا گیا ہے جہاں ان کی حالت تشویش ناک بتائی جاتی ہے، واقعے کے بعد فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے کر سکیورٹی سخت کردی ہے، دوسری طرف بلوچستان میں سکیورٹی فورسز پر حملوں اور اہلکاروں کی ہلاکتوں سے متعلق اعداد وشمار جاری کئے گئے ہیں، سنہ 2018ء میں بلوچستان میں 7 خود کش حملے اور 84 مختلف نوعیت کے بم دھماکے ہوئے سب سے بڑا انسانی المیہ مستونگ میں رونما ہوا۔ ایک سال کے دوران سکیورٹی فورسز پر ہونے والے118 حملوں میں 105 اہلکار شہید 217 زخمی ہوئے، پولیس کے زیر اثر علاقوں میں جرائم کے 2366 واقعات رپورٹ ہوئے 2017ء کے دوران واقعات کی تعداد 2295 رہی، لیویز کے زیر اثر علاقوں میں 565 ہونے والے واقعات میں 2017ء کے 775 واقعات کی نسبت 210 واقعات کم ہوئے، محکمہ داخلہ بلوچستان کے اعداد و شمار کے مطابق یکم جنوری سے 26 دسمبر تک بلوچستان میں سب سے زیادہ فرنٹیر کور بلوچستان کے 62 جوان 80 حملوں میں شہید ہوئے، پولیس پر 30 لیویز فورس پر ہونیوالے حملوں کی تعداد 8 ہے، سال 2018ء کے دوران 12 دسمبر کو آواران میں ہونے والے دہشت گردوں کے حملے میں پاک فوج کے 6 جوان شہید ہوئے، آئی ایس پی آر کے مطابق پاک فوج کے جوان خفیہ اطلاع پر تربت کے علاقہ بلیدہ میں دہشت گردوں کے خلاف آپریشن میں مصروف تھے اس دوران دہشت گردوں نے سکیورٹی فورسز کی ایک گاڑی کو باردودی مواد سے نشانہ بنایا جس کے نتیجہ میں پاک فوج کے 6 جوان شہید ہوئے۔

Share.

About Author

Leave A Reply