امریکی سینیٹ نے ایران خلاف ٹرمپ کے جنگی جنون پر بند باندھ دیا

0

صدر ڈونلڈ ٹرمپ ان کانگریس کی پیشگی اجازت کے بغیر ایران کے خلاف عسکری کارروائی نہیں کرسکتے امریکا میں حکمران ری پبلیکن پارٹی کے آٹھ اراکین سمیت اس قرارداد کے حق میں 55 جبکہ مخالفت میں 45 سینیٹرز نے ووٹ ڈالے۔۔۔

واشنگٹن (میزان نیوز) امریکی سینیٹ نے ایک قرارداد منظور کرکے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو کانگریس کی اجازت کے بغیر ایران کے خلاف کسی طرح کی فوجی کارروائی کرنے سے روک دیا ہے، امریکا میں حکمران ری پبلیکن پارٹی کے آٹھ اراکین سمیت اس قرارداد کے حق میں 55 جبکہ مخالفت میں 45 سینیٹرز نے ووٹ ڈالے، تاہم ٹرمپ اس قرارداد کو ویٹو کرسکتے ہیں، اس قرارداد کی منظوری کے بعد امریکی صدر کو اب ایران کے خلاف کسی طرح کی جنگ چھیڑنے سے قبل کانگریس سے منظوری لینا پڑے گی، قرارداد میں تاہم ناگزیر صورت حال میں صدر ٹرمپ کو فیصلہ لینے کی اجازت دی گئی ہے، ڈیموکریٹ سینیٹر ٹم کائینے نے قرارداد پیش کرتے ہوئے کہا کہ گوکہ ناگزیر حملے کی صورت میں صدر کو امریکا کا دفاع کرنے کی ہمیشہ اجازت ہے تاہم انہیں اپنی مرضی کے مطابق کوئی جنگ شروع کرنے کا اختیار نہیں ہوگا، سو رکنی سینیٹ میں حکمران ری پبلیکن پارٹی کے اراکین کی تعداد 53 ہے لیکن اس کے آٹھ اراکین نے اس قرارداد کی حمایت کی، اس طرح قراردار کے حق میں مجموعی طور پر 55 ووٹ پڑے، ری پبلیکن سینیٹر مائک لی نے قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ آخری چیز جو ہم چاہتے ہیں وہ یہ ہے کہ مشرق وسطی میں ایک اور بلا مقصد جنگ نہ ہو، واضح رہے کہ بغداد میں ایرانی جنرل شہید قاسم سلیمانی اور عراقی کمانڈر ابومہندی المہندس کو امریکی فوک کی جانب سے نشانہ بنائے جانے کے بعد امریکہ اور ایران کے درمیان جنگی صورتحال کو روکنے اور مستقبل میں ایسی صورتحال سے بچنے کیلئے پہلے کانگریس نے ٹرمپ کے اختیارات پر روک لگائی اور اب امریکی سینیٹ نے جہاں صدر ٹرمپ کی جماعت کو اکثریت حاصل ہے اس قرارداد کو اکثریت سے منظور کرلیا ہے، امریکی صدر نے اس طرح کی کسی بھی قرارداد کو ویٹو کرنے کی دھمکی دے رکھی ہے۔ صدر ٹرمپ کا کہنا ہے کہ اس طرح کی قرارداد امریکا کی کمزوری کی علامت ہے، صدر ٹرمپ اگر اس قرارداد کو ویٹو کرتے ہیں، جس کا پورا امکان ہے،  تو اسے مسترد کرنے کیلئے ایک نئی قرارداد پیش کرکے اسے کانگریس کے دونوں ایوانوں دو تہائی اکثریت سے منظور کرانا ہوگا، امریکی سینیٹ میں یہ قرارداد اس دن منظور کی گئی جب ایران اور دنیا بھر کے شیعہ مسلمان جنرل قاسم سلیمانی کی شہادت کے بعد چالیسویں منا رہا تھے۔

Share.

About Author

Leave A Reply