پاکستان یمن تنازع کا حصّہ ہرگز نہیں بننےگا وزیر خارجہ کا دوٹوک اعلان

0

شاہ محمود کے مطابق سعودی عرب سے اقتصادی پیکیج ہماری کامیابی کی واضح مثال ہے ریاض نے پیکج کے بدلے کوئی شرط عائد نہیں کی ہے سعودی عرب سے تعلقات ہیں اور ایران ہمارا ہمسایہ ہے ۔۔۔۔۔۔

اسلام آباد (میزان نیوز) پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے دعویٰ کیا ہے کہ سعودی عرب اور پاکستان کے تعلقات میں چند برس سے سرد مہری رہی جسے دور کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں، ریاض کے ساتھ ہمارے تعلقات تھے، ہیں اور رہیں گے تاہم حالیہ ملاقاتوں میں کوئی ایسی بات نہیں ہوئی کہ پاکستان یمن تنازع کا حصہ بنیں گے، سینیٹ میں خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ نے واضح کیا کہ سابق وزیراعظم نواز شریف نے بھی یمن تنازع کے حل کیلئے ثالثی کی کوشش کی تھیں اور اب وزیر اعظم عمران خان یمن کے معاملے پر کردار ادا کرنا چاہتے ہیں، انہوں نے کہا کہ یمن میں بدقسمتی سے جنگ ہورہی ہے، وہ مکمل طور پر تقسیم ہوچکا ہے، وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ سعودی عرب کی جانب سے اقتصادی پیکیج ہماری کامیاب کوششوں کی واضح مثال ہے، تاہم ریاض کی جانب سے پیکج کے بدلے میں کوئی شرائط نہیں لگائی گئیں، ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب سے ہمارے تعلقات ہیں اور ایران ہمارا ہمسایہ ملک ہے اس لئے ہم دونوں ممالک کے معاملے میں غیرجانبدار ہیں، شاہ محمود قریشی نے یقین دلایا کہ امریکا کی جانب سے ایران پر اقتصادی پابندیوں کی وجہ سے پاک ایران گیس معاہدے پر منفی اثرات نہیں پڑیں گے، انہوں نے مزید کہا کہ دسمبر میں کابل میں سہ فریقی ممالک کے مذاکرات طے ہیں جس میں چین، پاکستان اور افغانستان شامل ہوں گے، چین کے حوالے سے انہوں نے سینیٹ کو بتایا کہ ہم نے دنیا کو پیغام دینا تھا کہ چین سے ہمارا گہرا تعلق ہے اور بیجنگ کے دورے کے نتائج مثبت ثابت ہوں گے۔Image result for saudi pakistanوزیر خارجہ نے واضح کیا کہ گوادر جلد ہی ایک بڑا تجارتی مرکز بنے گا، سینیٹ کے ماحول سے متعلق انہوں نے کہا کہ سینیٹ میں پارلیمانی انداز میں ایک دوسرے پر تنقید کی جاتی ہے، کاش قومی اسمبلی کا ماحول بھی سینیٹ کی طرح ہوجائے، پاکستان پیپلز پارٹی نے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کی جانب سے سعودی عرب اور یمن کے درمیان ثالثی کے کردار سے متعلق بیان پر تحفظات کا اظہار کیا، پی پی پی کی رہنما شیری رحمٰن نے کہا کہ وزیر خارجہ نے ثالثی کے کردار سے متعلق اپوزیشن کے تحفظات دور نہیں کیے۔

Share.

About Author

Leave A Reply