امریکہ سعودی اتحاد حمایت ختم کرئے امریکی سینیٹ بل پر بحث ہو گی

0

ٹرمپ نے سعودی عرب کے ڈالرز کے بدلے اُسے انسانیت کے خلاف جرم کرنیکی کھلی چھٹی دے رکھی ہے ٹرمپ انتظامیہ نے سی آئی اے چیف کو سعودی صحافی کے قتل پر بریفنگ دینےسے روکا ہے ۔۔۔۔۔

واشنگٹن (میزان نیوز) امریکی سینیٹ نے یمن جنگ میں امریکہ کی جانب سے سعودی اتحاد کی حمایت ختم کرنے کے بل پر بحث کی منظوری دے دی ہے، فرانسیسی خبرایجنسی فرانس پریس کے مطابق یمن جنگ کے حوالے یہ ٹرمپ انتظامیہ کو ہائی والٹ کا جھٹکا ہے کیونکہ ٹرمپ نے سعودی عرب کے ڈالرز کے بدلے اُسے انسانیت کے خلاف جرم کرنے کی کھلی چھٹی دے رکھی ہے، خیال رہے کہ یمن کی ناکہ بندی میں امریکہ اور اسرائیل فضائیہ کی مدد بھی سعودی اتحاد کو حاصل ہے جبکہ امریکہ خطرناک اور ممنوعہ بمبوں کی سعودی عرب کو سپلائی جاری رکھے ہوئے ہے، ٹرمپ انتظامیہ کے وزراء نے بھرپور کوششیں کی کہ یمن جنگ کا معاملہ امریکی سینیٹ میں زیر بحث نہیں آئے مگر ٹرمپ کے وزراء ناکام ہوگئے، اس لئے امریکی سینیٹ نے یمن جنگ میں سعودی اتحاد کی حمایت ختم کرنے کے بل پر بحث کی منظوری دے دی، ملٹری سپورٹ ختم کرنے کے بل کے حق میں 63 اور مخالفت میں 37 ووٹ پڑے، امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو اور وزیر دفاع جیمز میٹس سینیٹرز کو قائل کرنے میں ناکام رہے، سی آئی اے چیف کی عدم شرکت پر سینیٹ کے ارکان برہم ہوگئے اور کہا ٹرمپ انتظامیہ نے سی آئی اے چیف کو سعودی صحافی کے قتل پر بریفنگ دینےسے روکا ہے، خبر ایجنسی کے مطابق ووٹنگ سے پہلے بند کمرہ اجلاس میں امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو اور وزیر دفاع جیمز میٹس نے قانون سازوں کو سعودی عرب سے تعلقات خراب نہ کرنے کی ہدایت کی تھی۔Image result for yemen warسی آئی اے چیف سینیٹ کے بند کمرہ اجلاس میں شریک نہیں ہوئیں، واضح رہے کہ سعودی عرب نے چند عرب اتحادیوں کے ساتھ مل کر 26 مارچ دو ہزار پندرہ سے یمن پر وحشیانہ حملوں کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے، اس دوران سعودی حملوں میں دسیوں ہزار یمنی شہری شہید اور زخمی ہوئے ہیں جبکہ دسیوں لاکھ یمنی باشندے اپنے گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہوئے ہیں، یمن کا محاصرہ جاری رہنے کی وجہ سے یمنی عوام کو شدید غذائی قلت اور طبی سہولتوں اور دواؤں کے فقدان کا سامنا ہے، سعودی عرب نے غریب اسلامی ملک یمن کی بیشتر بنیادی تنصیبات اسپتال اور حتی مسجدوں کو بھی منہدم کردیا ہے لیکن اس کے باوجود سعودی عرب یمن پر مسلط کردہ جنگ میں اپنے اہداف تک پہنچنے میں بری طرح ناکام ہوگیا ہے۔

Share.

About Author

Leave A Reply